بالاکوٹ

شاعر :آصف ثاقب

کتاب : زلزال

نوع : نظم

موضوع : حزنیہ

مرے اے شہرِ بالاکوٹ پیارے
تری میٹھی ہوا کے گھونٹ لے کر
مرے دل میں محبت جاگتی تھی
شہیدوں کی ہے خوشبو تیرے اندر
مرے پندار میں بھی موجزن ہے
ترے دیوار و در کا فخر اس پر
زمانے میں نمایاں ہو گیا تھا
مرے یاروں نے اس کو شعر کر کے
کتابوں کا اجالا کر دیا تھا
غضب کا زلزلہ آیا کدھر سے
پڑے تھے ڈھیر ملبوں کے زمیں پر
مرے اے شہرِ بالاکوٹ پیارے
تجھے جھٹکے نے کیا جھٹکا دیا تھا
ہلا کر رکھ دئیے بربادیوں نے
مکان و کوچہ و بازار تیرے
غبار و گرد کا طوفاں تھا ایسا
نظارا شہر کا اندھا ہوا تھا
مری آنکھیں بھی اندھی ہو گئی تھیں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.